نئے سال کے حوالے سے اشعار، نئے سال کی شاعری


عمر کا ایک اور سال گیا
وقت پھر ہم پہ خاک ڈال گیا
شکیل جمالی

سال نو آتا ہے تو محفوظ کر لیتا ہوں میں
کچھ پرانے سے کلینڈر ذہن کی دیوار پر
آزاد گلاٹی

پچھلا برس تو خون رلا کر گزر گیا
کیا گل کھلائے گا یہ نیا سال دوستو
فاروق انجینئر

نئے سال میں پچھلی نفرت بھلا دیں
چلو اپنی دنیا کو جنت بنا دیں
نامعلوم

کون جانے کہ نئے سال میں تو کس کو پڑھے
تیرا معیار بدلتا ہے نصابوں کی طرح
پروین شاکر

جس برہمن نے کہا ہے کہ یہ سال اچھا ہے
اس کو دفناؤ مرے ہاتھ کی ریکھاؤں میں
قتیل شفائی

اک سال گیا اک سال نیا ہے آنے کو
پر وقت کا اب بھی ہوش نہیں دیوانے کو
ابن انشا

اک اجنبی کے ہاتھ میں دے کر ہمارا ہاتھ
لو ساتھ چھوڑنے لگا آخر یہ سال بھی
حفیظ میرٹھی

ایک پتا شجر عمر سے لو اور گرا
لوگ کہتے ہیں مبارک ہو نیا سال تمہیں
نامعلوم

ایک برس اور بیت گیا
کب تک خاک اڑانی ہے
وکاس شرما راز

اے جاتے برس تجھ کو سونپا خدا کو
مبارک مبارک نیا سال سب کو
محمد اسد اللہ

اب کے بار مل کے یوں سال نو منائیں گے
رنجشیں بھلا کر ہم نفرتیں مٹائیں گے
نامعلوم

ﺩﯾﮑﮭﯿﮯ ﭘﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻋﺸّﺎﻕ ﺑﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﻓﯿﺾ
ﺍﮎ ﺑﺮﮨﻤﻦ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺳﺎﻝ ﺍﭼّﮭﺎ ﮨﮯ !...
ﻏﺎﻟﺐ


ﻧﮧ ﺷﺐ ﻭ ﺭﻭﺯ ﮨﯽ ﺑﺪﻟﮯ ﮨﯿﮟ ﻧﮧ ﺣﺎﻝ ﺍﭼﮭﺎ ﮨﮯ
ﮐﺲ ﺑﺮﮨﻤﻦ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺳﺎﻝ ﺍﭼﮭﺎ ﮨﮯ
ﻓﺮﺍﺯ

کسی کو سال نو کی کیا مبارک باد دی جائے
کلینڈر کے بدلنے سے مقدر کب بدلتا ہے
اعتبار ساجد

ﻣﻨﮩﺪﻡ ﮨﻮﺗﺎ ﭼﻼ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺩﻝ ﺳﺎﻝ ﺑﮧ ﺳﺎﻝ
ﺍﯾﺴﺎ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﮔﺮﮦ ﺍﺏ ﮐﮯ ﺑﺮﺱ ﭨﻮﭨﺘﯽ ﮨﮯ !...
ﺍﻓﺘﺨﺎﺭ ﻋﺎﺭﻑ

ﻭﮦ ﻋﻤﺮ ﮐﻢ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﯿﺮﯼ
ﻣَﯿﮟ ﺳﺎﻝ ﺍﭘﻨﺎ ﺑﮍﮬﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ !...
ﮔﻠﺰﺍﺭ

ﯾﮧ ﻗﯿﺪ ﻣﺎﮦ ﻭ ﺳﺎﻝ ﺗﻮ ﮨﮯ ﻋﻤﺮ ﺑﮭﺮ ﮐﺎ ﺭﻭﮒ
ﮐﺐ ﮨﻮﮔﺎ ﻭﺻﺎﻝ, ﺍﮔﺮ ﺍﺱ ﺑﺮﺱ ﻧﮩﯿﮟ !...
ﺻﺎﺑﺮ ﻇﻔﺮ


ﭘﭽﮭﻠﮯ ﺑﺮﺱ ﺗﮭﺎ ﺧﻮﻑ ﺗﺠﮭﮯ ﮐﮭﻮ ﻧﮧ ﺩﻭﮞ ﮐﮩﯿﮟ
ﺍﺏ ﮐﮯ ﺑﺮﺱ ﺩﻋﺎ ﮨﮯ, ﺗﺮﺍ ﺳﺎﻣﻨﺎ ﻧﮧ ﮨﻮ
ﺍﺳﺪ ﺿﯿﺎ

ﺍﺏ ﮐﮯ ﮨﻢ ﭘﺮ ﮐﯿﺴﺎ ﺳﺎﻝ ﭘﮍﺍ ﻟﻮﮔﻮ
ﺷﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﺁﻭﺍﺯﻭﮞ ﮐﺎ ﮐﺎﻝ ﭘﮍﺍ ﻟﻮﮔﻮ
ﻓﺮﺍﺯ

ﯾﮧ ﺧﻨﮏ ﺭﺍﺕ, ﯾﮧ ﻧﺌﮯ ﺳﺎﻝ ﮐﺎ ﭘﮩﻼ ﻟﻤﺤﮧ
ﺩﻝ ﮐﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﮬﮯ ﮐﮧ ﻣﺤﺴﻦ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺏ ﯾﺎﺩ ﺁﺋﮯ !...
ﻣﺤﺴﻦ

ﭘﮭﺮ ﻧﺌﮯ ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﺳﺮﺣﺪ ﭘﮧ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﯿﮟ ﮨﻢ ﻟﻮﮒ
ﺭﺍﮐﮫ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ ﯾﮧ ﺳﺎﻝ ﺑﮭﯽ, ﺣﯿﺮﺕ ﮐﯿﺴﯽ
(ﻋﺰﯾﺮ ﻧﺒﯿﻞ)

ﻣﺤﺴﻦ ﯾﮧ ﻓﺼﻞِ ﮔﻞ ﺑﮭﯽ ﻗﯿﺎﻣﺖ ﺗﮭﯽ ﭨﻞ ﮔﺌﯽ
ﺍﺏ ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ ﭘﮍﮮ ﮔﺎ ﭘﮭﺮ ﺍﮔﻠﮯ ﺑﺮﺱ ﻋﺬﺍﺏ
ﻣﺤﺴﻦ

ﺗُﻮ ﻧﯿﺎﺀ ﮨﮯﺗﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺻﺒﺢ ﻧﺌﯽ, ﺷﺎﻡ ﻧﺌﯽ
ﻭﺭﻧﮧ ﺍﻥ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﮨﯿﮟ ﻧﺌﮯ ﺳﺎﻝ ﮐﯿﮟ
ﻓﯿﺾ ﻟﺪﮬﯿﺎﻧﻮﯼ

ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﻮﮞ ﺗﻮ ﻣﺎﺗﮭﮯ ﭘﮧ ﻣﺎﮦ ﻭ ﺳﺎﻝ ﻣﻠﯿﮟ
ﮐﮩﯿﮟ ﺑﮑﮭﺮﺗﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺩﮬﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺍﻝ ﻣﻠﯿﮟ
ﺫﺭﺍ ﺳﯽ ﺩﯾﺮﺩﺳﻤﺒﺮ ﮐﯽ ﺩﮬﻮﭖ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮭﯿﮟ
ﯾﮧ ﻓﺮﺻﺘﯿﮟ ﮨﻤﯿﮟ ﺷﺎﯾﺪ ﻧﮧ ﺍﮔﻠﮯ ﺳﺎﻝ ﻣﻠﯿﮟ
ﺧﺎﻟﺪ ﺷﺮﯾﻒ

ﺍؐﻟﭩﺎ ﮐﺮ ﺩﻭ ﮐﯿﻠﯿﻨﮉﺭ،
ﻣﺎﮦ ﻭ ﺳﺎﻝ ﮐﮯ ﻧﺮﻏﮯ ﺳﮯ
ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﺑﺎﮨﺮ ﺁﻧﮯ ﺩﻭ
( ﻧﺎ ﻣﻌﻠﻮﻡ)

ﺁﺝ ﺍﮎ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﺱ ﺑﯿﺖ ﮔﯿﺎ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ
ﺟﺲ ﮐﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﺗﮭﮯ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ
(ﺍﺣﻤﺪ ﻓﺮﺍﺯ)

ﺍﯾﮏ ﻟﻤﺤﮧ ﻟﻮﭦ ﮐﺮ ﺁﯾﺎ ﻧﮩﯿﮟ
ﯾﮧ ﺑﺮﺱ ﺑﮭﯽ ﺭﺍﺋﯿﮕﺎﮞ ﺭﺧﺼﺖ ﮨﻮﺍ
( ﺍﻧﻌﺎﻡ ﻧﺪﯾﻢ)

ﮐﭽﮫ ﺧﻮﺷﯿﺎﮞ, ﮐﭽﮫ ﺁﻧﺴﻮ ﺩﮮ ﮐﺮ ﭨﺎﻝ ﮔﯿﺎ
ﺟﯿﻮﻥ ﮐﺎ ﺍﮎ ﺍﻭﺭ ﺳﻨﮩﺮﺍ ﺳﺎﻝ گیا
( ﻧﺎ ﻣﻌﻠﻮﻡ)

ﭼﮩﺮﮮ ﺳﮯ ﺟﮭﺎﮌ ﭘﭽﮭﻠﮯ ﺑﺮﺱ ﮐﯽ ﮐﺪﻭﺭﺗﯿﮟ
ﺩﯾﻮﺍﺭ ﺳﮯ ﭘﺮﺍﻧﺎ ﮐﯿﻠﯿﻨﮉﺭ ﺍﺗﺎﺭ ﺩﮮ
( ﻧﺎ ﻣﻌﻠﻮﻡ)

کتاب ِعمر کا اک اور باب ختم ہوا
شباب ختم ہوا ،اک عذاب ختم ہوا
 منیر نیازی

Post a Comment

0 Comments